Question(s):
Myself and my husband are currently going through a divorce. A legal civil divorce is currently in process and the first court hearing is in September where financials will be discussed. In the meantime I have also applied for an Islamic divorce via the Islamic sharia council in London for a Khulla I am 5 months into the process and within the next 2 months the process should be complete and they should grant me the divorce. In which case I will need to be in iddat for 3 months, and it will be haram for us to be under one roof. However, my husband is refusing to move out of the house, despite all his family being in the same town. And my family is out of town and I have the children who have the school and Madrasah routines. Legally, I have to wait for the court procedure which can take months especially as he is not cooperating, but in the meantime, he needs to move out of the house until the court makes a decision. I need some help, support and guidance in this matter as to what steps to take next to make him move out of the house so I can prepare for my iddat phase

Question: What is the ruling of iddah when a woman requests Khulla? Is it the same as the widow’s iddah?
Question: is the woman allowed to pray Namaz behind the husband if they are going through the divorce/khulla process?
Question: if the man is still living in the house and refuses to move out and according to the law of the country he is in his rights to stay there … can the woman still be granted her divorce via Islamic sharia law?
Question: What if a woman is seeking help from Sharia law and her husband is refusing to co-operate in any proceedings – doesn’t reply to any correspondence? Does the woman have further rights?

Answer(s):

In the Name of Allah, the Most Gracious, the Most Merciful.

As-salāmu ‘alaykum wa-rahmatullāhi wa-barakātuh.

Before we address your specific queries, a few preliminary points must be noted:
1) Khula’ is when the wife offers to forgive the mahr owed to her by the husband or offers to give him a certain amount of money in lieu of him issuing divorce. When the husband agrees to give the khula’, it will result in a talaq-e-baa’in (one irrevocable divorce) and the iddah will commence. If he has not verbally agreed, rather, he has only agreed on paper, then iddah will commence when he signs the papers. On the other hand, if the husband does not agree to the khula’, then there will be no talaq or iddah since he must agree in order for the khula to take place. Thus, in summary, khula῾ can only occur with the consent of the husband and khula῾ merely taken from the court (without the husband’s consent) will not invalidate the marriage. [1]

2) It must be noted that the wife applying for a court divorce will not result in a Shari’ divorce unless there is consent (verbal or written) from the husband and he intends to divorce the wife. [2]

3) Similarly, if the case is taken to a Shari’ Council, the annulment (Faskh) of the Shari’ Council will not be regarded as a Shari’ divorce unless two conditions are found:
a) The case made for annulment is genuine and the reasons provided for annulment are valid as per Shari’ah.
b) If there are no valid Shari’ grounds for annulment, it can only proceed with the husband’s consent. [3]

Once these key points have been understood, thereafter, your specific queries are now addressed:
1) If and when your husband gave consent for the Khula’ (verbally or written) then the khula’ is effected, which results in talaq-e-baa’in (one irrevocable divorce) [4]. In this case, your Iddah will be 3 menstrual cycles, 3 months (if you do not experience menses) or until delivery (if you are pregnant). [5]

2) You should avoid performing Salah behind him, rather you should perform Salah alone whilst maintaining Hijab (concealing yourself) from him completely as you would do with a non-mahram (marriageable kin/stranger). [6]

3) Yes, divorce can still occur with due process. In fact, the woman must spend her Iddah in the matrimonial home, unless there is a genuine reason not to do so [7]. In this case, the woman should maintain her Shari’ Hijab (concealing) and veil herself from the husband. [8]

4) You may refer to the Shari’ah council for this query. The Shari’ah council generally maintain due process in the case where there is no correspondence from the husband.

And Allah Ta’āla Knows Best.
Mufti Mubasshir Ahmed
3 Muharram 1442 / 11 August 2021

Concurred by: Annas Shah | Zayd Rasheed
Approved by: Mufti Tahir Wadee

Note: This fatwa is only to be viewed with the question asked. In the event of presenting this to a third party, please ensure it is coupled with the original question, as well as the references below for Islamic Scholars.


DISCLAIMER: The views and opinions expressed in this answer belong only to: the author, any concurring Ulama’ and the senior approving Muftis – they do not in any way represent or reflect the views of any institutions to which he may be affiliated.

Arguments and ideas propounded in this answer are based on the juristic interpretations and reasoning of the author. Given that contemporary issues and their interpretations are subjective in nature, another Mufti may reach different conclusions to the one expressed by the author. Whilst every effort has been taken to ensure total accuracy and soundness from a Shari’ah perspective, the author is open to any correction or juristic guidance. In the event of any juristic shortcomings, the author will retract any or all of the conclusions expressed within this answer.

The Shari’ah ruling given herein is based specifically on the scenario in question.  The author bears no responsibility towards any party that acts or does not act on this answer and is exempted from any and all forms of loss or damage.  This answer may not be used as evidence in any court of law without prior written consent from the author.  Consideration is only given and is restricted to the specific links provided, the author does not endorse nor approve of any other content the website may contain.


[References]
[1]
و أما ركنه فهو الإيجاب و القبول لأنه عقد على الطلاق بعوض فلا تقع الفرقة و لا يستحق العوض بدون القبول
[Al-Bada’i al-Sana’i, 4/319, DKI]

خلع کا مطالبہ عورت کی طرف سے ہوتا ہے، اگر عورت محسوس کرے کہ اس شوہر کے ساتھ اس کا نبھاؤ نہیں ہوسکتا اور وہ دونوں الله تعالی کی مقرر کردہ حدود کو قائم نہیں رکھ سکتے تو عورت شوہر سے خلع لینے کا مطالبہ کرے اگر شوہر خلع دینے پر راضی ہو جائے تو خلع ہو جائے گا
[Aap ke Masa’il Aur Unka Hall, 6/642, Maktabah Ludhyanwi]

بصورت نا موافقت زوجین یہ بہتر ہے کہ خلع ہو جاوے لیکن خلع میں رضا مندی زوجین کی ضرورت ہے عورت تو خود چاہتی ہے اور خلع پر راضی ہے مرد کو بھی راضی کر لینا چاہئے اگر وہ بعوض مهر خلع کرلے گا خلع ہو جاوے گا اور عورت اس کی قید نکاح سے باہر ہو جاوے گی ، پس شوہر کو سمجھانا چا ہئے یا بذریعہ حکام اس کو مجبور کیا جاوے کہ وہ خلع کرلے۔
[Fatawa Darululoom Deoband, 10/116, Dar Al-Isha’at]

اگر تخالف طبائع یا کسی اور وجہ سے زوجین میں نباہ دشوار ہو جائے اور شوہر طلاق دینے پر آمادہ نہ ہوتو شریعت سے اس کی بھی اجازت ہے کہ عورت اور مرد خلع کرلیں یعنی لفظ خلع ،یا اس کے ہم معنی کسی لفظ سے زوجین حقوق زوجین کو ساقط کر دیں، مثلا زوجہ اپنامہر ساقط کر دے اور زوج اپنی ملک نکاح کو زائل کر دے، یا عورت کچھ مال دیدے اور زوج اپنی ملک نکاح کو زائل کر دے۔
[Fatawa Mahmudiyyah, 13/341, Jamia’ Faruqiyyah]



[2]
سوال: اگر کسی وجہ سے یہاں کا قانون صرف بیوی کی بات سن کر علیحدگی کرادے (بیوی اپنی خواہش سے علیحدگی چاہے) تو یہ طلاق واقع ہوگی ہو یا نہیں؟
الجواب: محض لڑکی کی خواہش سے علیحدگی کردے تو اس سے طلاق واقع نہیں ہوگی بلکہ وہ بدستور آپ کی بیوی رہے گی۔
[Fatāwa Mahmūdiyyah, 19/393-394, Maktabah Mahmūdiyyah]

صورت مسئولہ میں عورت کی درخواست پر غیر مسلم جج نے فسخ نکاح کا جو فیصلہ کیا ہے وہ معتبر نہیں اس فیصلہ سے نکاح شرعا فسخ نہ ہوگا
[Fatāwa Rahimiyyah, 8/389, Dar al-Isha’at]

صورت مسئولہ میں عورت نے اپنے طور پر شوہر سے علیحدگی اختیارکرنے کے لئے کورٹ میں درخواست
دی مگر شوہر طلاق دینا نہیں چاہتا، اسی وجہ سے نہ اس نے کسی تحریر پر دستخط کئے نہ خود طلاق نامہ لکھا نہ کسی کو لکھنے کے لئے وکیل بنایا اور نہ زبانی طلاق دی، کورٹ نے عورت کی درخواست پر نکاح کا فیصلہ کر دیا تو یہ فیصلہ شرعی اعتبار سے غیر معتبر ہے اور اس سے نہ نکاح فسخ ہوگا اور نہ عورت کو طلاق واقع ہوگی۔
[Fatāwa Rahimiyyah, 8/383, Dar al-Isha’at]

[3]
اگر کسی جگہ حاکم مسلمان موجود نہ ہو یا مسلمان حاکم کی عدالت میں مقدمہ لیجانے کا قانونا اختیار نہ ہو، یا مسلمان حاکم قواعد شرعیہ کے مطابق فیصلہ نہ کرتا ہو تو اس صورت میں مذہب حنفی کے مطابق عورت کی علیحدگی کے لۓ بجز خواند کی طلاق یا خلع کے کوئی صورت نہیں، لیکن اگر خاوند طلاق اور خلع پر بھی کسی طرح راضی نہ ہو یا مفقود یا مجنون یا نابالغ ہونے کی وجہ سے اس سے طلاق وخلع نہ ہوسکے تو اس وقت مذہب امام مالک کے موافق جس کا اختیار کرنا بضرورت شدیدہ حنفیہ کے نزدیک بھی جائز ہے، مسلمانوں کی جماعت کا حکم بھی قضاے قاضی کے قائم مقام ہوجاۓ گا، اور اس کی صورت یہ ہے کے محلہ یا بستی کے دیندار (اور بااثر) مسلمانوں کی ایک جماعت کے سامنے جنکا عدد کم از کم تین ہو اپنا معاملہ پیش کیا جاوے اور وہ جماعت واقعہ کی تحقیق کرکے شریعت کے موافق حکم کردے۔ جماعت مسلمین کی شرائط: ۱) کم از کم تین آدمیوں کی جماعت ہو ۲) اس جماعت کے سب ارکان عادل ہو ۳) فیصلہ میں علماء کی شرکت لازم اور شرط ہے۔ ٤) جماعت مسلمین کے سب ارکان متفقہ فیصلہ دیں۔
[Al-Hilah al-Najizah, 147- 149, Dar Al-Isha’at]

اب ان اسباب کو بیان کیا جاتا ہے جنکی وجہ سے عورت کو نکاح فسخ کرانے کا اختیار حاصل ہوتا ہے اور اختیار ہونے کی جو شرطیں ہیں وہ لکھی جاتی ہيں آجکل اکثر لوگ فسخ نکاح کا اختیار ہونے میں شرطوں کی خبر نہیں رکھتے اور بلا وجود شرائط نکاح فسخ کرالیتے ہیں مگر ایسے فسخ کا شرعا بلکل اعتبار نہیں اور دوسری جگہ جو نکاح کیا جاویگا وہ سراسر باطل ہوگا، اس واسطے ان کا خاص طور پر دھیان رکھنا لازم ہے۔
[Al Hilah al-Nājizah, 149-150, Dar al-Isha’at]

ایک یہ کہ خاوند نامردی وغیرہ کی وجہ سے عورت کے قابل نہ ہو جسکو اصطلاح فقہ میں عنین کہتے ہیں۔ دوسرے یہ کہ مرد مجنون ہو۔ تیسرے یہ کہ مفقود لاپتہ ہوجاۓ۔ چوتھے یہ کہ موجود ہے اور نان نفقہ دینے پر قدرت بھی ہے مگر ظلم کرتا ہے نہ نان نفقہ دیتا ہے اعت نہ طلاق۔ پانچویں یہ کہ لاپتہ تو نہیں مگر بیوی بچوں کو چھوڑ کر کسی دوسری جگھہ چلا گیا نہ نان نفقہ وغیرہ کا کچھ انتظام کرتا ہے نہ خود آتا ہے نہ ان کو اپنے پاس بلاتا ہے اور نہ طلاق دیتا ہے، ان سب صورتوں میں عورت کی رہائی کے لۓ شرعی صورتیں جدا جدا ہیں جنکو بالتفصیل لکھا جاۓ گا لیکن ان سط میں یہ بات مشترک ہے کہ اس رہائی میں عورت یا اس کے اولیاں خود مختار نہیں بلکہ قضاۓ قاضی باقعدہ شرعی تحقیق کے بعد تفریق وغیرہ کا حکم کرے۔
[Al-Hilah al-Najizah, 148, Dar Al-Isha’at]

چنانچہ اس بات پر تمام فقہاں کا اتفاق ہے کہ صرف پانچ عیوب کی بناء پر قاضی کو تفریق کا اختیار ملتا ہے، ایک اس وقت جب کہ شوہر پاگل ہوگیا ہو، دوسرے جب وہ نام نفقہ ادا نہ کرتا ہو، تیسرے جب وہ نامرد ہو، چوتھے جب وہ بلکل لاپتہ ہوگی ہو اور پانچوییں جب غائب غیر مفقود کی صورت ہو، ان صورتوں کے سوا قاضی کو کہیں بھی تفریق کا اختیار نہیں ہے، اور محض عورت کی طرف سے ناپسنیدگی کی بھی فقہ میں فسخ نکاح کی وجہ جواز نہیں بنتی۔
[Islam Main Khula’ Ki Haqiqat, Mufti Taqi Uthmani, 243 (Printed with Al Hilah), Dar al-Isha’at]

اس صورت میں شرعی کونسل کو میاں بیوی کے درمیان نکاح فسخ کرنے کے لۓ مکمل شرعی کاروائی کرنا ضروری ہے، صرف یہ بات کہ زوجین کے درمیان نبھاو مشکل نظر آتا ہے، شرعی کونسل کی طرف سے فسخِ نکاح کی بنیاد نہیں بن سکتی، خواہ یہ نتیجہ برطانوی عدالت نے اخذ کیا ہو یا شرعی کونسل نے، بلکہ شوہر کا متعنت ہونا، سخت مار پیٹ کرنا، مفقود ہونا، مجنون ہونا، اور عنین وغیرہ ہونا اس میں داخل ہیں، اور ان اسباب کی تحقیق کے لۓ صرف برطانوی عدالت کی کاروائی کافی نہیں، کیونکہ اولا تو جج غیر مسلم ہوگا، دوسرے وہ ان شرعی امور کا احاطہ نہیں کرے گا جو فسخ نکاح جو فسخ نکاح کے لۓ شرعا درکار ہیں، پھر اگر معتبر اسبابِ فسخ میں سے کوئی سبب نہ پایا جاۓ اور نبھاو مشکل ہو تو شرعی کونسل شوہر کو خلع یا طلاق علی مال پر راضی کرنے کی کوشش کرے، اس سے زائد کوئی کاروائی اس کے دائرہ اختیار سے باہر ہے، لہذا وہ مقدمہ خارج کردے۔
[Fatawa Uthmani, 2/449-460, Maktabah Ma’ariful Qur’an]

[4]
وإذا اختلعت المرأة من زوجها فالخلع جائز، والخلع تطليقة بائنة عندنا
[Al-Mabsut, 6/199, DKI]

أما الخلع فقوله عليه الصلاة والسلام الخلع تطليقة بائنة ، ولأنه يحتمل الطلاق حتى صار من الكنايات ، والواقع بالكناية بائن
[Al-Bahr al-Ra’iq, 4/120, DKI]

[5]
قال أبو جعفر: (والعدة في الخلع، كهي في الطلاق) لقول الله تعالى: ﴿والمطلقات يتربصن بأنفسهن ثلاثة قروء﴾، ولم يفرق بين الخلع وغيره
[Sharh Mukhtasar al-Tahawi, 4/459, Dar al-Siraj]

خلع کی عدت طلاق کی طرح تین حیض ہے
[Imdad al-Ahkam, 2/824, Maktabah Ma’ariful Quran]

سواء كان عن طلاق، أو وفاة…وضع الحمل
[Al Nahr al-Fa’iq, 2/477, DKI]
[Radd al-Muhtar, 10/286, Farfur]

وأما عدة الحبل فمقدارها بقية مدة الحمل قلت أو كثرت حتى لو ولدت بعد وجوب العدة بيوم أو أقل أو أكثر انقضت به العدة
[Al-Bada’i Al-Sana’i, 4/434, DKI]

[6]
كما تكره إمامة الرجل لهن في بيت ليس معهن رجل غيره ولا محرم منه كأخته أو زوجته أو أمته، أما إذا كان معهن واحد ممن ذكر أو أمهن في المسجد لا) يكره
[Al-Durr al-Mukhtar, 3/550 – 551, Farfur]

قوله (في المسجد) لعدم تحقق الخلوة فيه
[Radd al-Muhtar, 3/550 – 551, Farfur]

ولو أمهن رجل فلا كراهة إلا أن يكون في بيت ليس معهن فيه رجل أو محرم من الإمام أو زوجته فإن كان واحد ممن ذكر معهن فلا كراهة كما لو كان في المسجد مطلقا
[Hashiyah al-Tahtawi ala ‘l Maraqi Al Falah, 1/304, DKI]

[7]
وعلى المعتدة أن تعتد في المنزل الذي يضاف إليها بالسكنى حال وقوع الفرقة والموت لقوله تعالى {لا تخرجوهن من بيوتهن} والبيت المضاف إليها هو البيت الذي تسكنه
[al-Hidāyah, 2/279, Dār Ihya’ al-Turāth]

قال: قوله: (وتعتدان في بيت وجبت فيه إلا أن تخرج أو ينهدم) أي معتدة الطلاق والموت يعتدان في المنزل المضاف إليهما بالسكنى وقت الطلاق والموت ولا يخرجان منه إلا
لضرورة
[al-Bahr al-Ra’iq, 4/259, DKI]

وتعتد المتعدة في المكان الذي سكنت قبل مفارقة الزوج وقبل موته قال الله تعالى: ﴿لا تخرجوهن من بيوتهن﴾ (الطلاق: ١) والإضافة إليهم باعتبار السكنى في البيوت التي كن يسكن فيها قبل المفارقة
[Muhit al-Burhani, 5/237, Idaratul Quran]

[8]
وإذا طلقها ثلاثا أو واحدة بائنة، وليس له إلا بيت واحد، فينبغي له أن يجعل بينه وبينها حجابا حتى لا تقع الخلوة بينه وبين الأجنبية، وإنما اكتفى بالحائل؛ لأن الزوج معترف بالحرمة
[Muhit al-Burhani, 5/237, Idaratul Quran]